»
چهارشنبه 26 مهر 1396

5

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

عبدالحسین سنز ستیمء محرم 1435 مطابق 10نومبر 2013 زڈبل سرينگرء پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[ اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ وَلْتَكُنْ مِنْكُمْ أُمَّةٌ يدْعُونَ إِلَى الْخَيرِ وَيأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَينْهَوْنَ عَنِ الْمُنْكَرِ وَأُولَئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ(آل عمران/104)صدق اللہ العلی العظیم۔

 امام زمان عجل اللہ تعالی فرجہ الشریف سندس خدمت منز تعزیت پرسی خاطرء جمع چھئي سپدیمت امہ عزاداری ہند لبہ لباب مفہوم  کہ ائس کرء ہو تمسندین نالن ساتھی پنن نالہ وصل۔سانیو ائچھو منزء گوژھ تیوتھ پاک پاکیزء اوش جاری گژھن یوتھ زن ائچھ سانی آسہ تہ اوش امام زمان سند آسہ ۔کیازء کہ یہ چھوء پیروان مکتب اہل بتن ہنزئی ذمہ داری کہ یمی زن یہ کتھ عیان کرن ۔

یوس میہ آیه،" وافی هدایه"میہ تلاوت کئر؛ پروردگار عالم فرماوان سورہ آل عمرا ن آیت 104 منز توہیہ منز گژھہ اکھ جماعت آسن <وَلْتَكُنْ مِنْكُمْ أُمَّةٌ>اکھ جماعت کیاہ گژھہ آسن؟

[یہ  اکھ امت گژھہ] <يدْعُونَ إِلَى الْخَيرِ >[آسن]۔سوء گژھہ نیکی ہند دعوت دیون۔<وَيأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ> امر گژھہ کرن نیکی ہند،<وَينْهَوْنَ عَنِ الْمُنْكَرِ >برائي گژھہ رکاوٹ بنن،<وَأُولَئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ >یہوی جماعت چھئي رستگار۔

امام حسین علیہ السلام سند ناو ہیہء ، یعنی سوء چھوء دپان بہء ونہ قرآنک تفسیر۔امام حسین علیہ السلامنہ یمہ حرکتہ ء ہند یوس زن پہلو قرآن کس واضح نعرس خلاف آسہ،اصولس خلاف آسہ بے تردید گژھہ دپن یہ چھنہ امام حسین علیہ السلام سنز کتھ کینہ۔یہ چھنہ امام حسینن ووتھ کینہ ۔امام حسین علیہ السلام سند قیام چھوء اسہ اسلامء کہ احیاءؤک ناو۔اسلامس بدلیووی لبادء ،لباس بدلیووی ، حلیہ بدلیووی ابوسفیان تہ آل ابو سفیانن ہند سیرت آو وننہ سیرت رسول اللہ!۔ محمد و آل محمدن ہنز سیرت آو کفر تہءالحاد تہء شرک عنوان کرنہ ۔ عزاداری چھئی امہ باپت۔نہ کہ امام حسین کیازء گو شہید۔یتھس مقامس پیٹھ گو سوء فائز ۔اگر امام حسینن زندء اوس روزن بیہ روزء ہا دہن ورءین ،پنژہن ورین ، ہتس وریس،مرنہ خاطرء چھنہ کانہ واویلا کران کہین ، واویلا کران چھوء اتھ پیٹھ کہ یمی زن معیار بدلاوکھ قرآنک ،تمن معیارن ہنز نشاندہی کرنہ خاطرء چھئي ائس عزاداری کران ۔نتہ گئي از 1374 وری امام حسین علیہ السلامس شہید گئمتس،از کیاہ چھئي ضرورت تلہء؟۔ از کیاہ ضرورت چھئي تمس ؟

امام حسین علیہ السلامن یوس زن کربلاہس منز پنن یہ پیغام دیوت "اَلا تَرَوْنَ اِلَي الْحَقِّ لا يُعْمَلُ بِهِ، وَ اِلَي الْباطِلِ لا يُتَناهي عَنْهُ"توہی چھیونا وچھان حقس پیٹھ چھنہ عملی گژھان۔امام حسین ونان سنہ 61 ہجری یس منز کربلاہس منز"اَلا تَرَوْنَ اِلَي الْحَقِّ لا يُعْمَلُ بِهِ، وَ اِلَي الْباطِلِ لا يُتَناهي عَنْهُ" باطلس چھنہ رکاوٹھا گژھان کینہ ۔یمہ ساعتہ یتھ زمانس منز ،یمہ ساعتہ تہء توہی وچھووکہ حقس پیٹھ چھنہ عمل گژھان کینہ ،باطلس روک تھام چھنہ گژھان کہین ،یتھس وقتس منز چھوء تہنز ذمہ داری بنان " لِيَرْغَبَ الْمُؤْمِنُ في لِقاءِ اللَّهِ مُحِقّاً"امہ خاطرء چھوء مؤمنس[بوتھہ نیرن]اگر زن تمسندءاتھ حرکتہ پیٹ قائم روزنہ خاطرء موت تہء نصیب گژھہ ، امس چھئي سوئے حرکت اختیار کرن۔کیازء کہ موت کیاہ چھو، (یوس زن حق خاطرء حرکت کرء"فَإنی لا أَرَی المَوتَ إلَّا السَّعادَةَ وَ الحَیاة مَعَ الظّالِمینَ إلّا بَرما"میانہ خاطرء چھوء موت سعادت ۔یوس میانہ خاطرء مندچھ چھئی ، میانہ خاطرء ننگ تہ آر چھوء،سوء گو ظالمس ساتھی زندگی کرئن۔گو مرثی منز چھئي ائس ونان ائس چھنہ ظالمس ساتھی کہین ،ائس چھئی حقچ ترجمانی کران ۔ائس چھئي ونان خدا ین کوس قرآن اوس نازل کورمت یوس زن رحمت چھوء ،سوء قرآن نہ یوس زن باعث زحمت چھوء ۔اللہ اکبر کرتھ چھوء ونہ کینس  تہء[انسان] ذبح یوان کرنہ ،مگر بد قسمتی چھئی ،ائس چھئی اتھ منز بئڑ مجرم!حسین سند چھئی ناو ہیوان مگر یزید سنز چھئي کامی کران ۔یوس روح حسینن اسہ منز منتقل کور ،ائس چھنہ تتھ کن توجہ کران کہین۔یمی زن امیک حاشیہ یک  پہلو آئس  تمن چھئی اہمیت دوان ۔

کربلا چھوء اسہ امامت تہ قیادت ہیچھہ ناوان ،اسہ تھاوی امامت تہء قیادت طاقچس پیٹھ،اسہء ائن رشتہ داری۔یلہ زن رشتک معیاری اوس امامت تہ ولایت ۔

یمہ ساعتہ یہ مرحلہ یہ یےکہ اسہ گژھی پنن پان بدلہ لاون ۔یہ چھوء امام حسین پننہ نس اتھ خطبس منز ونان۔ وین چھوء وچھن ائس چھا دیندار کنہ نہ ۔ائس چھا دنیادار کنہ دیندار۔امام حسین پانے فرماوان "النّاس عَبيدُ الدُّنْيا"لوکھ چھئی دنیا پرست،نہ کہ دین پرست ۔"النّاس عَبيدُ الدُّنْيا وَ الدِّينُ لَعْقٌ عَلى اَلْسِنَتِهِمْ"دین چھوء لق لقہ زبان،زیوء ونان ؛ائس چھہ نا دیندار ،مسلمان ،شیعہ،اَسا زہ وندو امام حسینس۔مگر یہ امام حسینن وونم[سوء کرءنہ،دپان]سوء گو امام حسین بہ ءکوت واتہ تور۔یہ اوس نا امہ  خاطرء ..تمن اوس کرن،تمی ائس نا اہل بیت ،یمی آئس نا شہداء کربلا۔یہ اوسا کینہ  نعوذبالله، نعوذبالله، نعوذبالله، نعوذبالله کانہہ ڈرامہ سیریل؟یہ گو ، یہ چلوی یہ سیریل موکلیووی ۔امام کمہ باپت کئر آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمنن پانس پتہ معرفی کہ میہ پتہ چھئی 12 وصی میانی۔کیاز کہ یہ چھوء رسول رحمت سند دین صبح قیامتس تان۔اکوی دین،امہ پتہ یی نہ بیہ کانہہ دین کینہ ۔وین زمان مطابق ،مکان مطابق ہر زمانک امام ونیو توہیہ وین کینس کیاہ چھوو کرن۔

حضرت علی علیہ السلامس آو نہ یہ انگج تلنہ ،گوڈء کورت خلافتس انکار پتہ کورت اقرار۔

امام حسن مجتبی ہس آو نہ وننہ کہ اگر زن حضرت علی علیہ السلامن گوڈء اکراہ کور ،پتہ اقرار کور ژء کیازء کورت صلح۔

امام حسینس چھنہ دپان اگر زن امام حسن مجتبی ہن صلح کور ژء کیازء کورت قیام۔

امام زین العابدین علیہ السلامس چھنہ ونان اگر ہے امام حسین نن قیام کور ژء کیازء کورت قعود۔

امام محمد باقر علیہ السلامس چھنہ ونان اگر ہے زن امام زین العابدین  نن دعا و نیایش منز گذور ژء کیوزء بیوٹھک تبلیغ کرنہ ، ژء کیوزءبیوٹھک سبق وننہ نہ۔

ہر امامس چھئی ہر زمان مطابق یمیوک ضعف امتس منز لبنہ آو تمیوک اصلاح آو کرنہ۔امر بالمعروف آو کرنہ ۔

مگر ائس چھنہ یمی معیار پانس برونہ کنہ تھاوان ،یہ ترکئر گئژھ اسہ آسن کہ بہء چھوء سا دیندار کنہ بہء چھوس دنیادار۔

"النّاس عَبيدُ الدُّنْيا وَ الدِّينُ لَعْقٌ عَلى اَلْسِنَتِهِمْ،  يَحوطونَهُ ما دَرَّتْمَعائِشُهُمْ فَاِذا مُحِّصوا بِالْبَلاءِ قَلَّ الدَّيّانونَ"

یمی دیندار چھئي یہند تعداد چھوء واریاہ کم،وین یلہ یمن دیندارن تہء چھئي کہوٹ لگان  اتہ تہء چھوء کم گژھان۔

"قَلَّ الدَّيّانونَ"اتہء چھئي مختصر [تعداد روزان]۔

عالمس منز وچھوویا پننہ گھرء پیٹھے کرو شروع ،پتہ کرو محلہء پیٹھے شروع،پتہ گام و شہر وغیرہ ، ہر جایہ  منز چھوء اسہء یہوے معیار قائم گژھان ۔

گژھہ ناہ ، کیازہ کہ یمہ ساعتہ اسہ معیار بدلائی ۔ میہ چھوء گَسُن مثلا بڈگوم بہء کھسہ ہاے ویے یس اوڈی [گاڑء] بہ واتہ اوڈی ، بہء ونہ میے اوس بڈگوم واتن بہء کیازء ووتس نہ؟ ۔

اہنوو وتھ ہے ژء غلط اختیار کرتھ ژء کپاری واتک بڈگوم۔

یوتان نہ ائس پنن واضح موقف معین کرو ائس ہیکو نہ ھدفس حاصل کرتھ کینہ ۔

امسی امام زمان سندس مظلومس جناب قاسم مس کوتاہ چھوء ائس ظلم کران !جناب قاسم من دیوت اسہ امامت تک سبق ۔ اسہ دوپوس امامت چھوء دینداری ہند سبق اسہ ون  اسہ کیاہ لگہء۔سانس معاشرس منز چلہ نہء امامت امامت [کینہ]تھاو طاقچس پیٹھ۔ژء[جناب قاسمء] او سووئي خاندر کرن ، ژء آئسی مہرن ضرورت ،ژء اوسکھ امام حسینس پتہ پتہ پکان ژء ژلک تمس کور ہیتھ ۔ ژء ون اسہ یہ دلیل۔امامت مہ ون۔کیازء کہ امامت ساتھی چھوء میہ پانس کردار شیرن ،ہمہ ساتھی چھنہ ، جایز پاٹھی یا ناجایژ پاٹھی۔یہ کوس معیار چھئي ائس پننہ جایہ قرار دوان ، یوس زن روح چھوء  امام حسین علیہ السلام اسہ دوان  قرآن، کہ توہی رودیو سوء جماعت یتین وچھووی غلطی گژھان چھئی تتھ کریوو روک تھام۔مگر ائس چھنہ تہ بنان کہین۔

جناب قاسم سنز یہ معصومیت یتھ زن تاریخن بعضی میدان کربلاہس منز شہید گژھنہ ساتھی مغالطہ چھوء گومت کہ تیوتاہ اوس کمسن کینژھو چھوء 9 ووہر لیوکھمت ، کینژھو 11 ووہر ، کینژھو 14 تہ کینژھو 15 ۔ یمہ سندء معصومیتک حال یہ اووس کہ خیمس منز دراو نہ "زرہ" ہی تمسندء سایزچ۔لذا تمی ہیچ نہ زرہ ہی کانہہ لاگت۔سوء چھوء واحد مجاہد یوس زن صرف کرتہ یازارس منز تہ عمامہ لاگئت دراو میدان۔یلہ زن تاریخن چھوء لیکوکھمت ؛ اکھ چپنہ کھور اوس بند ژھیونمت ۔یعنی نعلس تان تہ اوس نہ جناب قاسم مس کھور واتان کہین ،یہ اوس حال جناب قاسم سند ۔

وین یمہ ساعتہ وچھو ائس جناب قاسم چھوء کوس ؟

شب عاشورا چھوء تتھ خیمس منز جمع گژھان یتین زن آب چھوء یوان جمع کرنہ یا تتھ خیمس نزدیک ۔ یا تمہ کیس خیمس منز یا تمہ لرء لور یوس زن اجتماع گژھان چھوء اتین چھئی زء پیغام اسہ امام حسین علیہ السلام دوان :

امام حسین علیہ السلام چھوء دپان ؛وچھووی یمن چھوس بہء ضرورت ،توہیہ ساتھی چھنہ یمن کانہہ داد معاملہ ، توہی کریو کامی میانی شُر بچہ تہ تولیوکھ،وتھیو نیریو آرامچ زندگیاہ بہ چھوء سو توہیہ راضی ۔ بہ ونو یہ تہء کہ چھنہ یتھی اصحاب کانسہ نبی یس ، کانسہ ولی خدا یس  نصیب گمئت ۔چھنہ کانسہ نبی یس ، کانسہ ولی یس یتھی گھرک افراد میسر گمئت۔

یہ چھوء امام حسین گوڈء ونان۔

جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام ونان ؛ تتھ آرامس ، تتھ زندگی کوس نار دمو یتھی اسہ امام تنہا آسہ ۔ ائس کیاہ دمو رسول خدایس جواب ۔(میانہ زندگی کرنک چھوء اکھ معیار میہ چھوء اکہ دوہ یتہ نیرن ، میہ چھوء سمکھن[آنحضورس،سوء] دوہ یی یہ۔اگر بہء کلمہ گو چھوس ، کلمہ گو آسنوی میون چھوء ونان کہ میہ چھوء رسولخدایس نش جواب دیون ۔ بالغ گژھی تھی  پیٹھہ وونوک میہ یہ کر ،یہ مہ کر ، یہ کر ۔کیازء ؟[کیازہ کہ]میہ چھوء رسولخدا تمہ ساعتہ ونان ؛ اگر میانس اقرارس اقرار کورت تتھ دمے بہء یہ انعام ، بہ ء چھوء سے ضامن خدایس نش ، یتھ زن انکار کورت تتھ چھوء سے نہ بہء ضامن کہین ، خدا کئری اتھ عذابس منزکری  مبتلا ۔ گو اسہ چھوء سورے داد معاملہ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمس ساتھی ۔)ابوالفضل العباس ونان ژء[امامس]بغئر کیاہ کرو ، رسول رحمتس کیاہ جوا ب دمو ۔اگر میہ ٹکرء کرن ، پتہ زندء کرن ، پتہ بیہ ٹکرء کرن مگر بہء یژھا امامس بغئر زندء روزن۔یہ چھنہ اسہ قبول کہین۔

یہ ہوے رود اہل بیت تو منز ء، اصحابو منزء اکھ اکھ نفراہ ونان ،ہر کانسہ ہند چھوء کم و بیش یہ ہوے مصداق ونان کہ ائس کتھہ کئن ہیکو پنن امام تنہ تنہا تراوت ،سانہ زندگی ہند کیاہ معیارہیکہ آست یمہ ساعتہ ائس پننہ نس امامس تھر کروپتہ کرو عیش شچ زندگی ۔

گو یہ اوس امتحان ۔امہ پتہ چھوء پتہ چھوء امام حسین علیہ السلام بشارت دوان ۔

کہوٹ چھئي ہمیشہ کیازء کہ قرآن تہء چھوء اسہ ونان < مَنْ جَاءَ بِالْحَسَنَةِ>اسہ یمی ثواب میلن یمین ثوابن چھئی رئچھ کرن،اگر قیامت تان ساتھی تئگ پکناون ساتھی چھئي ۔اگر اسہ ونی عزاداری کئر ثواب میلی، نیبر درای گناہ کئر یمی[ثواب] دئد،موکلئے۔

اگر زن رسول رحمتس[بے ادبی سان] آلو کرنہ ساتھی "محمّد"{صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم}تلہ سا نیبر نیر ۔ خداین دوپ <أَنْ تَحْبَطَ أَعْمَالُكُمْ وَأَنْتُمْ لَا تَشْعُرُونَ>(الحجرات/2)"حبط"گئی تہند تمام اعمال ،کمن صحابی کبارن!یمی زن تمس لرء لور ساتھی چھئي ، ساری عمل گئیو ضایعہ ، ختم گئی ، اتہ رود زیرو،اتہ  چھووی نہ کہین تہندس اکاونٹس منز،بیہ تورو نہ پانس فکرء۔کلام توگکھ نہ ونن کہین۔اسہ خاطرء چھا یہ توی کہ ائس کرو حسین حسین پتہ یوس تہء غلطی تگہء کرن ائس چھئي آزاد تمہ خاطرء ۔< مَنْ جَاءَ بِالْحَسَنَةِ>ائس چھئي حسینی تلہء یلہ اسہ حسینیت تس رائچھ تگہ کرن ۔یہ حسین سند پیغام ، یہ حسین سنز دگ ساتھی تگہء اسہ پکناون محشرس تان،تلہء چھوء اسہ سوء سوری امتیاز میلان یمیوک وعدء چھوء آمت دنہ ۔کیازء اسہ چھوء امام حسین علیہ السلام خدائی بناون ، کہ اگر ائس خدائی بنوو ائس چھئی کامیاب ۔ اگر شک آسہ کامیابی چھنہ ، دپان وچھووی کربلا ہس کن ۔قرآن نس نے تگیو معنی کرن ،مگر وچھوو از گئی 1334 وری تہندین دلن منز چھئي ونہ تہ سوے تازگي ،کیازء یہ "قربة الی الله"چھوء تاثیر دوان۔یوس الہی رنگہ ساتھی رنگہ ناونہء یی سوء چھنہ ضایعہ گژھان کنیہ،سوء چھوء ہمیشہ روزان اور اہل بیت چھئي اسہ یہوے کتھ ہیچھ ناوان ۔

یمہ ساعتہ اما م وین بشارت چھوء دوان ، مرحبا[کران](یعنی کہوٹ تہء لئج،اسہ یہ آزمایش کرنہ ۔ اگر اسہ یہ فکرء ترء کہ ژء کورت یتھہ کئن ژء گژھک جہنمس ،بہء دپہ ہے بہء کوس حسین حسین اوسس کران ۔یہ امتحان لگہ۔شب عاشورا ہیوتن بوڑ امتحان پنہ نین دوستن ۔)امہ پتہ دژن بشارت اکہ اکہ چھوء ونان ژء گژھک شہید،ژء تہ گژھک، ژء کمہ حالہ گژھک ،ژء ساتھی کیاہ گژھہ ۔ کم و بیش سوء منظر تان چھوء بیان کران امام حسین علیہ السلام ۔ یمن درمیان چھوء اکھ نوجواناہ ، امام حسین علیہ السلام یوکن بوتھ چھوء کران سوء چھوء تمن زیٹھین پئتی کن یوان ۔ ادب چھوء برونہ چھنہ یوان ۔بعضی مقتلو چھوء لیکوکھمت کہ جناب قاسم چھوء ٹینڈین پیٹھ تھود وتھان کہ وین پے یس میہ کن نظر۔ یہ چھوء وچھان کہ امام کیازء چھنہ میے یوت ونان ، میہ کیازء چھنہ یہ بشارت میلان ۔ وین یلہ سارنی اطمنان گو کہ سارنے ساتھی کتھ گئي ، وین چھنہ امامس ونن کہین ۔ برونہہ کن چھوء یوان عرض چھوء کران ؛مولا کیاہ میہ گژھہ نا شہادت نصیب کینہ ؟میہ گژھہ نا یہ سعادت نصیب کہ بہ ء کرء پننہ نس امام زمانہ سندس اکس ژہس اکس لحظس زندء زیادء روز نس منز تعاون ۔ کیازکہ یہ چھوء امام زمان سندء وجود ساتھی چھوء خدا ی سند برکا ت زمین پیٹھ نازل گژھان ،یہ ہیکہ سوے [زانتھ]یمس قرآنس پیٹھ ایمان آسہ ۔ یہء چھوء امہ باپت رتہ چھپہ امامس پننہ نس لگن کہ بہء گژھہ نہ وچھن بہء آسہ زندء میانس امام سند حیات مبارک گژھہ گُل۔اللہ اکبر۔

وین چھنہ یہ تہء نہ ، یہ دعواداری تہ  چھنہ کہین ، وین چھوء وچھن اسہ کیاہ چھوء تورمت فکرء ۔اگر یہ پننہ نین یی تین عزیزن یتھہ کئن سوال چھوء کران اسہ کرء نا امام حسین ،اما م زمان کرء نا اسہ ۔

کیازء کہ گوڑء چھوء اسہ عزاداری منز امام زمانی تھوومت طاقچس پیٹھ۔ائس چھئی ونان جنا ب قاسم مس دمو تسلیت ، کمس دمو تسلیت ، کیازء دموت تسلیت ۔سوء چھنا امام حسینس ساتھی یکہ ووٹے۔شہداے کربلا چھہ نا رسول رحمتس ساتھی ۔ائس کیازء چھہ نہ جرئت سان ونان امام زمانن، دوکھہ لد چھوء ونہ کینس زمینس پیٹھ امام زمان ائس چھئی تمہ سندس دوکھس منز یژھان شریک گژھن۔

جناب قاسم یمہ ساعتہ یوتاہ اشتیاق کران چھوء ،یہ ما چھوء بلی مذاق قاہ کہ بہء تہ گژھہ مرن ۔امام چھوء سوال کران ؛کوبریا ژء کیاہ چھئي باسان موت؟

جناب قاسم دپان:" أَحْلى مِنَ الْعَسَلِ"یہ چھوء ماچھہ کھوتہ تہء میوٹھ باسان ۔ یہ کتھ کیازء چھنہ ائس وژھہ ناوان ۔یہ کیازء چھنہ دپان میہ چھوء خاندر ٹوٹھ۔میہ چھئي مئز لاگن ٹاٹھی ۔ میہ چھوء سہرء گنڈن ٹوٹھ۔بلکہ دپان چھوء میانہ خاطرء چھوء موت "أَحْلى مِنَ الْعَسَلِ"کیازہ ،پانے یمہ ساعتہ میدان کربلا آکھ ژء وونتھ نا"اَلا تَرَوْنَ اِلَي الْحَقِّ لا يُعْمَلُ بِهِ "توہی چھوو نا وچھا ن حقس چھنہ عملی گژھان کنیہ ۔بہء وچھا بہء آسہ زندءمیہ برونہہ کنہ آسہ میون امام زمان حقچ ترجمانی کران بہء روز زندء تہء بہ ء وچھن سوء مارء گژھان ، امہ کھوتہ چھوء بہتر  أَحْلى مِنَ الْعَسَلِ" ۔مگر خداین وون نا اکھ جماعت چھئي امر بالمعروف خاطرء ، نہی عن منکر خاطرء ، یمے چھئی رستہ گار ،بہء یژھہ امر بالمعروف کرن وول آسن، بہ گژھہ منکرس خلاف اکھ شاہد روزن کہ میہ کور پننہ پان رتہ چھپہء پننہ نس امامس یمی زن حقچ آواز زندء تھاوی ۔یمی ز ن رسول رحمت سند دین مسخ گژھہ نشہ بچووی۔

یوس زن ائس کینہ زبان حال چھئي ونان ،زبان حال وننہ نس چھئی گنجایش ، مگر اگر زن شاعرن کانہہ کتھ لیچھ یہ چھنہ تلقی کرن کنیہ کہ یہ چھوء واقعیت ۔ یتھی مکتبس منز اگر زن اسہ (یہ چھئي بے ادبی استاد گرامیس تھی یتین لب کشائی کرن)اگر زن کانسہ امام معصوم سند حدیث بہمو نقل کرنہ مگر تمسند ناو آسہ نہ پے کینہ کہ یہ چھا حضرت علی علیہ السلام سند حدیث کنہ حسن مجتبی علیہ السلام سند کنہ امام جعفر صادق علیہ السلام سند کنہ امام زمان سند ، ناو چھئس نہ پتہ حق چھوس نہ یہ دپہ یہ چھوء حضرت علی علیہ السلامن فرموومت ،یلہ زن یہ آسہ امام جعفر صادق علیہ السلامن فرموومت ۔بلکہ [اتھ صورتس منز]تمس چھوء ونن " قَالَ المَعصُوم"معصومن وون۔یلہ یوتاہ اتھ حدیث نقل کرنس منز اسہ یژھ کہوٹ چھئی ، کیاہ چھا اجازت ائس ہیکو ہر منظر   ونت کہ پتہ وون جناب زینب بن یتھہ کئن۔جناب زینب بن وون یتھہ کئن، یعنی سوء چھوء حدیث۔امام حسین علیہ السلامن وون یتھہ کئن ، گو سوء چھوء حدیث۔تتھ منز گژھہ نہ زیرء زبرء ہنز تہ خطا آسن،بلکہ زبان حال گو بدل۔یتھہ کئن زن <الْحَمْدُ لِلَّهِ>مرثیہ منز چھئی ونان:"دوپنس بنا"۔گو یہ چھوس بہء ونان ۔ یتھہ کئن ائس قرآنس ترجمہ چھئی کران ، یہ چھنہ ائس قرآنک ترجمہ ائس ونان کہین [مترجم]دپان میہ تور فکرء۔اگر زن دریاوس منز بہء اتھہ ژھنہ میہ گژھہ اتھہ اودُر بہء دپہ یہ کیا گو دریا، نہ یہ چھنہ دریاو کہین،امہ دریاووک آب چھوء میہ  رژھ کھنڈ اتھس لاریومت نہ کہ یہ چھوء  دریا و ۔قرآنک ترجمہ چھنہ یہ ائس ونان چھئی قرآن چھوء ونان یتھہ کئن ،نہ یہ چھوء میہ فکرء تورمت ۔

اہل بیتن ، کربلاہ ہچ ذکر ترجمانی یوس کران چھئي یہ چھوء میہ فکرء تران اسلئے چھنہ یہ مستند ، یو س کتھ مستند آسہ سوء چھئی مستند اندازے بیان کرن۔و اگر ونو ماز تہء آئس تتہ،مہرازء آو پورنہ تتہ ،تلہء گژھہ نا امام سندین باقین کتھن ساتھی تہ ء تطبیق گژھن۔سوء تحلیل گژھہ نا قرآن ساتھی تہء تثبیت گژھن۔یلہ سوء گژھانی تلہ ء کیاہ چھئی ائس کران۔ائس کیازء چھنہ سوء کتھ پانہ سمجھان تاکہ یمہ ساعتہ ائس نوحہ [کرو]علمہء کڑو، سڑکین پیٹھ نیرو ائس سمجھاوء ہون بیاکھ کہ اسلامس کیاہ اوس پیش آمت ۔یزید بن معاویس ائس ونان امیرالمومنین حسین بن علی یس ائس ونان کافر۔

امام حسین علیہ السلام یوس زن رسول رحمت چھوء میدان کربلا ہس منز ،یوس زن معنی چھوء ونان کہ بہ چھوس ۔رسول رحمت ونان بہء چھوس حسین سندء ساتھی ۔ سوء چھوء ونان کمی بدلی۔ قاضی شریح ہیوہ نفر یوس زن خلفای راشدینن ہند قاضی القضات چھوء رودمت سوء چھوء فتوی لیکھان ؛امام حسین چھوء کافر !امام حسین چھوء واجب قتل!اتھ پیٹھ کیازء چھنہ ودان ، ائس کیازء چھنہ یہ وژھہ ناوان ۔

ائس کیازء چھئي اتھ سوء لباس لاگان یمہ ساتھی چھئي یہ باسا ن مبہم تحریک۔ ائس کیازء چھنہ یہ ہیکان ویژھہ ناوتھ کہ قرآنس کیاہ اونک پیش ،رسول رحمتس کیاہ اونک پیش ،امام زمان کیازء پیو و خدایس ژورء تھاون [کہ]اسہء بیعقلن گژھ عقل ین،اسہ گوژھ یہ ترن فکرء رسول رحمت کیاہ دین ہیتھ آو اسہ ، اگر ائس اتھ پیٹھ عمل کرو کتھہ کئن گژھہ انسان سند سوء خلیفہ خدا  آسنک تفسیر محقق ۔اللہ اکبر۔

جناب زینب سلام اللہ علیہا امیوک حوالہ دوان  ۔بس یہ مرثیہ پرء جناب زینب سنز تہنز زحمت تمام۔

یمہ ساعتہ جناب زینب سلام اللہ علیہا "تَلّ زَینبیّه"پیٹھہء وچھان چھئي پننہ نس امام زمانس  نہ صرف ذبح گژھان بلکہ نحر تہء گژھان۔ رشتہ داری چھوء حسن اتفاق یمی چھئی پننہ نس امام زمانس یاری کرنہ آمت ،بایس نہ کینہ۔اللہ اکبر۔

دپان ائس چھنہ رشتہ داری نبھاوان کنیہ ائس چھئی دینداری نبھاوان ۔

یہ دینداری اگر کم تہء آسہ مگر یہ گژھہ دینداری آسن۔یہ گژھہ صرف "قُربَةً إلی الله"آسن  ۔ پانے یلہ ذاکر ونان یمہ ساعتہ جناب زینب سلام اللہ علیہا ہن اونٹہء پیٹہء پان دیوت دارتھ ، تمی کیازء کور سر روژھ بدنس نمت سلام۔بایس کیاہ ائس نمت سلام کرن۔یہ چھہ نا اسہء یہوے امام زمان سند پتہ دوان میون امام زمان چھوء خونس منز سراند دنہ ۔

یہوے کریکھ دژن یمہ ساعتہ  "تَلّ زَینبیّه"پیٹھہءاکہ طرفہ نظر کرن مقتلس کن ووچھن رسول رحمت سند نور عین کمہ حالہء، وین دتن رسول رحمت کیاہ اوس ونان ، کوس حسین یہوے کورن مرثیہ منز بیان ۔ روضے رسولس کن نظر فریاد ژھوٹن:"السَّلامُ عَلَيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ"

یعنی مرثی منز گژھہ گوڈنچ کریکھ آسن " يَا رَسُولَ اللَّهِ "دوکھہ لد چھوء " رَسُولِخدا "بناونہ آمت تمہ دوہ وینہ کینس چھوء امام زمان ،ائس گژھو وینہ کینس کریکھ دین "یَا اِمامِ زَمَان"جناب زینب ونان ؛" السَّلامُ عَلَيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ ، صَلَّى عَلَیْکَ مَلَائِکَةُ السَّمَاءِ"زمین و آسمانک ملائک چھئی سلام سوزان، کربلاہس کن دتہء نظر۔ولہء وچھ قتل گاہ ہس کن "هَذَا الْحُسَیْنُکَ مُرَمَّلٌ بِالدِّمَاءِ" یا رسول اللہ چیون حسین یمسندء باپت سجدء اوسکھ کران ،یمہ سندء باپت خورمہ اوسکھ ژٹان ، تمسندس بارس منز اوسکھ ونان بہء چھوس امہ سندء ساتھی یہ چھوء میانہ ساتھی ،یہ چھوء بہشت تہء کین جوانن ہند سردار، وچھیک نا تمسی بہشت کس سردارس کتھہ کئن چھہ ہے خونس منز سراند دیوتمت " مُقَطَّعُ الْأَعْضَاءِ"امسند بدن چھوء پارہ پارء آمت کرنہ ،یمسندس چیون عمامہ اوس دوشن چیانی عبا آئس سوء چھئي آمژ تار تار کرنہ ۔ أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

امام حسین قرآنک آئینہ-05 PDFفایل ڈاونلوڈ کرنہ خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


قدرت گرفته از سایت ساز سحر