»
شنبه 25 آذر 1396

               

8

 
امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

عبدالحسین سنز نوم محرم 1435 مطابق 12نومبر 2013 امام بارہ ژایر ماگام پرمژ مجلس

 

اَعُوذُ بِاللّهِ منَ الشّيطانِ الرَّجيم

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛نحمده و نستعینه و نؤمن به و نتوکّل علیه و نستغفره و نصلّی و نسلّم علی حبیبه و نجیبه و خیرته فی خلقه حافظ سرہ و مبلغ رسالته سیّدنا و نبیّنا و طبیب نفوسنا و حبیب قلوبنا  ابی‌القاسم المصطفی محمّد(صلی اللہ علیه و آله  وسلم)[اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم] و علی آله الأطیبین الأطهرین المنتجبین المعصومین سیّما بقیّةاللَّه فی الارضین۔ و صلی علی ائمہ المسلمین حماۃ المستضعفین و ھداۃ المومنین علی امیرالمومنین علیہ آلاف تحیۃ والثناء۔

اما بعد؛قال اللہ سبحانہ و تعالی فی محکمہ کتابہ :

 بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ؛ قُرْآنًا عَرَبِيا غَيرَ ذِي عِوَجٍ لَعَلَّهُمْ يتَّقُونَ(الزمر/28) صدق اللہ العلی العظیم۔

یوس سورہ زمر آیت 28میہ تلاوت کئر < قُرْآنًا عَرَبِيا غَيرَ ذِي عِوَجٍ لَعَلَّهُمْ يتَّقُونَ>خدا فرماوان قرآن چھوء یتھی منز نہ کنہ قسمک ذی عوج یعنی ادلہ بدلہ چھنہ اتنی کہین،انحراف چھنہ اتھ منز کہین ۔امام حسین علیہ السلامس متعلق تہء چھہء ائس یی ونان " لَمْ تَمِلْ مِنْ حَقٍّ إِلَى بَاطِلٍ"یعنی اکہء ژہیوک تہ چھنہ امام حسین علیہ السلام سندس وجودس منز انحراف لبنہ آمت ۔

گو یوس زن اسہ قرآن ہدایت چھوء دوان کہ یتھی منز نہ انحراف چھوء کہین ۔ حسین چھوء تمیوک تفسیر بیان کرا ن، یمسندس تفسیرس منز انحراف چھنہ کہین ۔ عزادار چھوء حسین حسین کران لذا گژھہ امس عزادار سنز تطبیق گژھن یا حسینس ساتھی یا قرآنس ساتھی ۔ اگر سون کردار ،گفتار ، رفتار امکیس کنہ تہ گوشس پرزلاینہ زانن گژھہ اسہ چھوء کنہ جایہ عئب پننہ نس پانس منصوب کرنس کلمہ " لَا إِلَهَ إِلاَّ الله " ہس ساتھی ۔

امام حسین علیہ السلام یوس زن اسہ پننہ عملہ ساتھی "لَا إِلَهَ إِلاَّ الله مُحَمَّداً رَسوُلُ الله"صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمک سوء سبق کھا چھوء اسہ برونہہ کنہ تھاوان یتین نہ انسانس کنہ شک و تردیدچ گنجایش چھئي ۔قرآنن وون نیکی ہند عمل ء چھوس دنیاہس منز تمیوک جزا دوان آخرتس منز تہء۔امام حسین علیہ السلام چھوء اسہ یہ یقین بئڑراناوان ۔یوتاہ دوہ دوہ گژھان چھوء امچ تازگی چھئي بڑان ۔از گئی امام حسین علیہ السلامس 1374 وری شہید گئمتس ، یہ چھنہ زیوء پھیورنی یوت کہین مگر زن چھوء یہ ازیوک واقعہ راتک واقعہ ۔یہ کیاہ وجہ چھوء ؟ یعنی سانس ایمانس منز گژھہ ہوریر گژھن ۔

بظاہر آو پوژء پریون امام حسینس کرنہ مگر امام حسین علیہ السلام گو نہ نابود تمہ ساتھی کہین  ، یہ گو تمہ ساتھی تیوتاہ زیادء جاودان ۔ یعنی سانہ خاطرء چھوء یہ سبق ژء یوس کامی  خدایس سندء باپت کرکھ ژء تہ مرکھ نہ زہین ۔ ژء منز تہ روزہ ہمیشہ تارگی یتھی کئن زن ژء میانہ تحریک کن وچھان چھوکھ، کہ امام حسین علیہ السلامس یوس تہ مصیبت پیش آو سوء اوس امہ کویی بشارت تہء دوان کہ قیامت تک دوہ چھوء امیوک جزا میلن وول ۔یا یہ کہ میون بہترین یار و مددگار چھوء میون پروردگار عالم ۔یمی امس مقابلہ آئس تمی آئس امہ خاطرء تیار کہ اسہ نشہ چھوء اقتدار ، اسہ نشہ چھوء طاقت ، اسہ نشہ چھوء امکانات مگر امام حسین علیہ السلام چھوء دپان میہ نش چھوء خدا ۔ اور خدا خدا کرنہ ساتھی چھئی ائس از وچھان کہ امام حسین علیہ السلامن کوس سبق دیوت اسہ ۔

امام حسین علیہ السلامن یوس زن اسہ یمو سبقو منزء اکھ سبق کھا دیوت سوء اوس سون دوست پرزء ناونک کہ اسہ گوژھ تگن دوست پرزء ناون ، دشمن پرزء ناون۔

سانین نظرن تل دوست کوس دشمن کوس؟

یمس میہ ساتھی صلح آسہء میہ چھوء باسان سوء چھوء دوست ، یمس نہ میہ ساتھی صلح آسہ سوء چھوء میہ باسان دشمن۔

کیا امام حسین علیہ السلام سنز عزاداری کرنہ ساتھی چھا اسہ یی دوست تہ دشمن تورمت فکرء؟

یا دوست گو میون کہ یوس میانس عالمس تہء مانہ،تہ سویے گو میون دوست۔یا میانس پاٹس مانہ ، یا میانس محلس مانہ ، میانس امام بارس مانہ سوء چھوء میون دوست ۔

امام حسین علیہ السلامن تہ ہووا اسہ دوستی ہند معیار ۔ تمی کوس وون دوست کوس چھوء تہ دشمن کوس چھوء ؟

قرآنن دوپ چون دشمن کوس سا چھوء ؟

شیطان۔

مگر بہء کیاہ چھوس ونان ؟

میون دشمن چھوء یمی میہ سلام کئرنہ کینہ ۔یا امس منجوو میہ روپیہ ہت امی دیوت نہ میہ کینہ ...

امام حسین علیہ السلام اسہ دوستس تہ دشمن سنز تعریف بیان کران ۔ قرانن یوس زن دوست تہ دشمن اسہ بیان کور ، تمچی وضاحت کران مولا امیرالمؤمنین علی ابن ابیطالب علیہ السلام نہج البلاغس منز حکمت 295۔مولا فرماوان :

"أَصْدِقَاؤُکَ ثَلاَثَةٌ"

چیانی دوست چھئي تریہء قسمک۔

" وَأَعْدَاؤُکَ ثَلاثَةٌ"

چیانی دشمن تہء چھغي تریہ ء قسمک۔

وارء کئرزیو دقت۔

" فَأَصْدِقَاؤُکَ: صَدِيقُکَ"

یمی زن تریہ قسمک دوست چھئی ،تمہء منز گو اکھ چیون دوست ۔دویم گو:"وَصَدِيقُ صَدِيقکَ"چیانس دوست سند دوست۔تریم گو:"وَعَدُوُّ عَدُوِّکَ"چیانس دشمن سند دشمن گو چیون دوست۔

یعنی اکھ گو ژء دوست ،بیاکھ گوئی دوست سند دوست ،بیہ گویی دشمن سند دشمن۔یمی چھی ژء تریہ دوست ۔

یتھے کن چھی تریہ دشمن ۔

" وَأَعْدَاؤُکَ: عَدُوُّکَ"

چیون دشمن۔

" وَعَدُوُّ صَدِيقِکَ"

چیانس دوست سند دشمن ۔

" وَصَدِيقُ عَدُوِّکَ"

چیانس دوست سند دشمن۔

چیون دشمن، چیانس دوست سند دشمن ، "عَدُوُّکَ، وَعَدُوُّ صَدِيقِکَ، وَصَدِيقُ عَدُوِّکَ" چیانس دشمن سند دوست۔

امام حسین علیہ السلام امچ کوس تفسیر بیان کران ؟

یہ چھا قرآنی دوستی دشمنی ؟کنہ یہ  زن ائس عام اصطلاح ہس منزدوستی دشمنی ہند معیار بناوان چھئی؟

اگر ائس حسینی آسہ ہاو، حسنیت آسہ ہا سئنہ، مژ کم سے کم یتھ موضوعس پیٹھ گوژھ نہ اسہ مغالطہ  آسن کینہ ۔حسینی یعنی امس گوژھ معیار اکویی آسن،یوس خدائی چھوء سوء چھوء میون دوست ۔ یوس شیطانی چھوء سوء چھوء میون دشمن ۔

امام حسین علیہ السلامن ہوو یہوے معیار ،تفسیر کورن قرآنک بیان۔یتھی کئن نہ قرآنس منز انحراف چھوء ،یتھے کئن چھنہ حسینس منز انحراف کینہ ۔یہ چھوء سیز وتھ ہاوان ۔یوس زن ائس خدایس چھئی ونان<اهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِيمَ>(الفاتحة/6)یعنی حسین لبن۔اگر حسین لب سئز وتھ لئب۔مگر وین چھئي ائس پانے ائچھ وٹان اتھ منز ، ائس چھنہ یژھان سوء حسین یمی زن رسول رحمت سند دین زندء تھوو، ائس نہ چھئی یژھان سوء سمجھن نہ چھئي یژھان تمہ باپت کینہ پہل کرن ، بلکہ یوس زن میہ ہٹیہ چھوء ووتھمت حسین میہ گژھہء سوئی آسن ۔ہٹیہ کتھہ کئن چھوء وسان ؟

سوء گژھہ یون میانس امام بارس منز ،سوء گژھیہ یون میانس جلوسس منز،سوء گژھہء یون میانہ مرثیہ منز ،سوء گژھہ میانس وعظس یون،ادء چھوء امام حسین ۔اگر نہ آسہ تلہ چھنہ نہ کہین ۔(عملا چھوء یی ، یہ چھوء ونن گژھان مشکل مگر عملا چھئي ائس یی کران )

پاٹ باز ی گئي ٹھیک ، ہر زمانس منز چھوء پنن اکھ منہاج آسان ،طریقہ آسان ،اکس چھوء اکسند طریقہ یوان پسند بیس چھوء بیہ سند طریقہ  پسند یوان ۔ مگر اتھ منہاج جس تہء طریق قس چھوء اسہء دینہ کھوتہ ءتہء زبردست وزن دیوتمت، یتھی پیٹھ اسہ اصل اصول چھوء مشد گژھان ،فروعات چھئي اسہ پیٹھ حاکم بنان ۔

اگر اکس اکھ عالم پسند چھوء ،بیس چھوء بیاکھ پسند ۔اکس چھوء اکھ ذاکر پسند بیس چھوء بیاکھ ذاکر پسند ۔اکس چھوء اکسند نوحہ پسند یوان ،بیس چھوء بیہ سند نوحہ پسند یوان ۔اتین کتہ چھوہ دوستی تہء دشمنی ہند سوء حکم یوس زن اسہ پننہ نس پانس پیٹھ نافذ چھئ کران ۔ ائس چھئی گنہگار بنان عزاداری کرتھ یمی اسہ خدا خدا ہیچھہ نوو، تمسندس سبق قس منز تمسندس درسگاہ ہس منز عمرء پرنہ باوجود تور نہ اسہ خدایی فکرء ۔

بہء تراوء نماز پرن ژء ژٹکھ نہ میہ ساتھی دوستی کہین ۔ مگر اگر ژء میہ روپیہ دہ منجت تمی دمے نہ ژء ژٹھک میہ ساتھی دوستی ۔یا بالفرض میہ کور ژء ساتھی وعدء ، میہ کور وعدء خلافی ۔یہ بناوء بہء معیار مگر یتھی منز  زن خدائی رنگ آسہ سوء چھنہ ائس ملاک تھاوان کینہ ۔اگر یہ کتھ امام حسینن اسہء آسہ ہا فکرء طرمژسون اجتماع آسہ ہا زیادء کھوتہ زیادء بوڈ بنان۔

امام حسین علیہ السلامن دوپ:"مِثْلِی لَا یُبَایِعُ مِثْلَهُ"میہ ہیوہ انسان ہیکنہ یزیدس ہیوس انسانس ساتھی بیعت کرتھ کینہ ۔یعنی رحمن ہیکنہ شیطانس ساتھی [کنوی سپدت کینہ ]وین یوس رحمانی بنہ ء سوء ہیکنہ شیطانی  سطح ہس پیٹھ معاہدہ کرتھ کہین ۔

اگر یہ سانین گھرن منز یہ موضوع ہک حکم حکمفرما آسہ ! مثلا ائس خاندر چھئی کران  ،اسہ چھوء دین باسان صرف یمہ ساعتہ نکاح پئر،والسلام۔ نکاح پئر پتہء چھنہ اتھی دین نک عمل دخل کہین ۔ خاندار چھوء کھکھر دوان زنانء ، زنان چھئي کھکھر دوان خاندارس۔ہوء کمہ باپت یہ ء کمہ باپت؟

تہء چھنہ دونونے پتہ ۔

یلہ زن خاندارس اطاعت کرن چھئي زنانہ خدایہ سندء باپت نہ کہ شوہر سندءباپت۔شوہرس چھئي خانہ دارء ہند حقوق بجہ انن خدای سندء باپت نہ کہ زنانہ ہندء باپت۔یا اولادس ،یا بائیس ، یا دست تس ، عالم مس یا ذاکر رس ، یمس تہ یوس یمس  ساتھی رشتہ چھوء   سوء چھوء صرف خدایہ سندء [باپت آسن لازمی]یوتاہ اتھی منز  حکم خدا نافذ آسہ تیوتاہ چھوء یہ نورانی رشتہ بنان ۔تیوتاہ چھنہ اتھ رشتہ تس دراڈ پیوان کہین۔تیوتاہ چھنہ اتھ رشتہ تس زوزر اژان کہین۔< صِبْغَةَ اللَّهِ وَمَنْ أَحْسَنُ مِنَ اللَّهِ صِبْغَةً >(البقرة/138)رنگ خدائی چھوء بہترین رنگ یہ چھنہ چھتان کہین۔رنگ خدا چھوء تلیہ گژھان یلہ زن  اسہ خدای سندء باپت، آسہ تراوی یہ محبت تچ کتھ تہء کربلا ہس  منز رشتہ داری منز ۔ اسہ چھوء امام حسین علیہ السلام تہ جناب زینب سلام اللہ علیہا سند رشتہ باسان یمی آئس بائی بارن نہ کہ خدائی احکام کوتاہ اوس مسلط ۔ خدا چھوء دپان< إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِنْدَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ>(الحجرات/13)توہیہ منز چھوء افضل سوء یوس زن تقوی لحاظہ افضل چھوء ۔ امام حسین علیہ السلام چھوء امام زمان جناب زینب سلام اللہ علیہا چھئی پننہ نس امامس فدا کرنہ درامژ پان ،بووی آسن چھوء حسن اتفاق ۔ بویی آستھ گژھی آن مانی کرنہ ہا ، ناز ہاوء ہا ، مگر سوء آئس نہ تمس بائیس درامژ ساتھی کہین یمس ساتھی ناز برداری ہند موضوع آسہ ہا ۔یتھے کئن جناب علی اکبر علیہ السلام ۔

جناب علی اکبر علیہ السلام مالس ساتھی رشتہ تھاوتھ کمیوک ؟

خدای سند رشتہ ۔

ائس چھا اتھ سنان ؟۔

یمہ ساعتہ کربلا ہس نزدیگ چھوء کافلہ واتان مولا حسین چھوء کلمہ استرجاح پران:< إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيهِ رَاجِعُونَ>(البقرة/156)جناب علی اکبر علیہ السلام سوال کران :بابہء توہیہ کیازء پورو کلمہ استرحاح ،خئری چھا؟۔امام چھو فرماوان؛ میہ ترایوو کلہ ، میہ ووچھ زن ہاتفی صدا دوان کہ موت تک قافلہ چھوء پکان تہء موت چھوء تمن پتہ پتہ دوان ۔

جناب علی اکبر علیہ السلام کیاء چھوء امس ونان :( مول تہء چھوء امام زمان تہء چھوء)"أَلَسْنَا عَلَى الْحَقِّ"ائس چھنا حق کس پیٹھ کہین ؟

قرآن دپان قرآنس منز چھنہ کہین انحراف ۔ حسین نس متعلق چھئی ونان حسین نس منز چھنہ کہین انحراف ۔حسین نس ساتھی پکن وول تہء یہوے سوال کران :انحراف ما ہز چھوء اسہ "أَلَسْنَا عَلَى الْحَقِّ"ائس چھنا حق کس پیٹھ ۔

امام حسین علیہ السلام چھئی فرماوان: خدا چھوء شاہد میون قدم چھنہ برونہہ کن پوکمتوی مگر حقء باپت ۔

گو علی اکبر تہء چھوء کہوٹ  امام زمانس برونہہ کنہ  تھاوت کہ کیاہ  ائس چھا حق کس پیٹھ کنہ باطل لس پیٹھ۔ اگر حق کس پیٹھ چھئي تیلہء کوس پرءوای چھوء ائس گژھہ وء موتس پیٹھ مسلط کنہ موت گژھہ اسہء پیٹھ مسلط۔

یوتھ مزاج چھا اسہ کہ اسہ منز آسہ دوست تہ دشمن پرزء ناونک معیار،یہ چھا امام زمانس تابع کنہ نہ ۔یہ چھا اما م زمان سند دوست سند دوست کنہ یہ چھوء تمسند دشمن ۔

وین کینس چھوء امام زمان پردے غیب بس منز  ، یتھی دورس منز یہ دوستی تہء دشمنی کمہء معیارء چھئي ائس وچھان ، کمہ معیارء چھئي ائس تولان ؟

 اسہء چھوء کربلا ونان کہ تہنز دوستی دشمنی چھنہ نہ صرف  یہ کہ توہی اگر پگاہ دعوی کریو شیعہ آست  آئسیو توہی ونان یہ چھوء میون دشمن ۔ شیعہ آست ۔پانہء پیرو اہل بیت آسہ۔اکھ اکس ائسیو دشمن تلقی کران ۔دپان ہوء پاٹ چھوء سانی دشمن تہند دشمن چھئي ائس،بلکہ توہی ہیکوی نہ سنی ین پنن دشمن ونتھ۔امام حسین چھوء اسہ یی ہیچھہ ناوان۔کیازء؟

اگر زن شیعہ آسہ مگر شیطانی آسہ ،تمس ساتھی آسنہ کہین تہ داد معاملہ ۔اگر سنی آسہ،شیطانی آسہ، تمس ساتھی چھنہ نہ کہین داد معاملہ ۔ اتین چھنہ رشتہ داری  کہین تہ،سوء شیعہ آئستن سوء سنی آئستن ،سوء امامزادء آئستن  ۔اگر زن امامزادء تہء آسہ مگر شیطانی حرکت کرء تمس ساتھی چھنہ کہین رشتہ داری کہین۔جعفر کذاب چھوء بئڑ مثال ۔سانہ خاطرء اکھ کہوٹ ۔ ائس کمہ زویوء ونو ...بہء کرء ہتہء رنگی  امام حسین علیہ السلام سند کردار داغدار امہ پتہ دپہء بہء بہء چھوس "سیّد" میہ کریوی احترام، یلہء نہ جعفر کذاب ....تمس ہش تہ چھا کانسہ سیادت ،یمس یوتاہ رشتہ اوس امام زمانس پیتر، کہمس امامس بووی، دہمس امام نیچوو،پتہ نیم، آٹھئم،ستم یمی ساری بوڈبب ، جدبوڈبب...یمی ساری چھئی [معصوم]یہند فرزند چھوء مگر یژی یاژی یہ کریانی[غلطی] کہ امام زمان ائسس پئی امامس ہیکہ امامئی  جنازء پرت ، سوء پچیو برونہہ کن امام حسن عسکری یس جنازء پرء نس ۔ اتھی پیٹھ چھسنہ ائس ونہ تہء تھپ تلان ،ائس چھس ونان کذاب ۔پتہ چیون تہء میون حال کیاہ چھوء ۔گو معیار چھئي اسہ بدل ،یہ ائس ونہ کینس عنوان کران چھئي امس  ساتھی ، یمس عالمس ساتھی ،یمس صاحبس ساتھی  میہ دلچسپی چھئي  اتھ چھوس بہء دشمنی تہء دوستی ہند معیار عنوان دوان ، معیار قرار دوان،یلہء زن یہ  واقعا امام حسین علیہ السلامس ساتھ استحصال چھوء بلکہ ظلم ونوو۔

امام حسین علیہ السلامن اگر زن یہ اصول یوس زن اسہ یہ چھوء تھوومت یوتاہ اسہ پانہ وانی نفرت چھئي کدورت چھئي ، دوری چھئي وجہ چھوء یی کہ یہ نفرت چھنہ اسہ خدای سندء باپت کہین ۔

میہ چھوء عبدالحسین امہ موجوب خران،یہ چھوء حکم خدایس نافرمانی کران ، یہ چھوء امام زمان سندس وننہ نس ادلہء بدلہ کران ۔گو یہ چھوء عین ثواب ۔امسند شہہ کھالن والن تہء چھوء پتہ ثوابی بنان۔

کانسہ  عالمس ساتھی آسہ  امہ بابت لگاو کہ یہ چھوء میہ صحیح وتھ ہاوان ،یہ چھوء میہ امام زمانس ساتھی نزدیک بناوان ۔گو یہ چھوء معیار۔

اگر زن ائس امہ نبر چھئی نیران قطعا ائس چھئی  یوس امام حسین علیہ السلامن اسہ سبق دیوت تتھ مخالف حرکت کران ۔

" لَا تَتَّخِذَنَّ عَدُوَّ صَدِیقِکَ صَدِیقاً"

مولا امیرالمؤمنین فرماوان بیس جایہ ؛ پننہ نس دوست سند دشمن مہ بناون دوست۔"فَتُعَادِیَ صَدِیقَکَ"[امہ ساتھی چھوکھ پننہ نس دوست تس ساتھی دشمنی کران]۔

امام حسین علیہ السلام یمہ ساعتہ میدان کربلا ہس منز واتنہ برونہہ چھوناہ ہر کانسہ دعوت دوان کلمہ گوس،سوء شیعہ اوس ،سوء سنی اوس۔ لذا حسینی آلوتہ گژھہ آسن عمومی، کلمہ گو خاطرء ۔یوس زن دشمن گژھہ سوء گژھہ کافر آسن ۔کافرس ساتھی کرء بہء کارو بار تہء کافرس ساتھی تھاوء بہء دوستانہ تہء کمہ معیارء؟بلکہ میہ چھوء کافرس منز تہء تمسی انسانس ساتھی رابطہ تھاون یوس زن کم سے کم اکھ مذہبی عقیدء آسہ تھاوان ۔خالق کائینات تس متعلق عقیدء آسہ تھاوان ، جنت و  جہنم  مس متعلق آسہ عقیدء تھاوان ، پننہ نے عقیدء مطابق آئستن تھاوان مگر تمس منز گوژھ آسن مذہبی عنصر کہ سوء خدا ی سندس وجودس چھنہ سوء منکر کینہ ۔

مگر تتھ برعکس ائس کمس چھئي پنن دوست ونان ۔ یمی زن سانہ  یمی پاٹ بازی  اسہ نقصان چھوء واتناوان وجہ چھوء یی کہ ائس چھئی اتھ منز شیطانی عنصر حاوی بناوت رحمانی عنصر چھنہ بنان کہین۔یلہ زن پاٹ بازی گژھی امہ باپت گژھن  کہ ائس گژھی پننہ خاطی دور کرنہ ۔اکھ اکس اتھہ روٹ کرن۔<تَعَاوَنُوا عَلَى الْبِرِّ وَالتَّقْوَى>(المائدة/2)گوژھ اسہ منزء حاکم بنن کہ ائس چھئی ثواب کین کامین منز اتھہء روٹ کران ۔ یلہ زن ائس برعکس چھئي  تتھ پیٹھ عمل کران ۔

امام حسین علیہ السلامن یوس زن اسہ سبق دیوت میدان کربلاہس منز سوء چھوء اسہ سوء جذبہ زندء کران کہ یمہ ساتھی اسہ روزء قیامتک آسن، سوء یقین بڑء۔

توہی چھوی بوزان مختلف طریقو کہ یوس اکھا شہید روت  میدان کربلاہس منز  گژھان تمس رود بشارت دوان امام حسین علیہ السلام ، یتھی حدس تام کہ مثلا جناب عبداللہ ہیوہ بچہ چھوء یوام امامس دفاع کرنہء خاطرء ،امام حسین علیہ السلام چھوء انتہائی زخمی یہ عبداللہ ، حسن مجتبی علیہ السلام سند فرزندچھنہ برداشت کران یہ ووچھن یہء چھوء نیران امس دفاع کرنہ ،امس پیٹھ تہء چھوء حملہ گژھان ، امسند چھوء بازو قلم گژھان ،مسلس چھوء اویزان گژھان ، حرملہ چھوء بیاکھ تیر لگاوان امس چھوء حلقس لگان امام حسین علیہ السلام چھوس دپان صبر کر ژء گژھک پننہ نین اصلافن ساتھی وصل ۔یعنی اطمنان چھوءکہ خدا چھوء وچھان ۔ علی اصغر علیہ السلام چھوء اتھن کیتھ ذبح گژھان امام حسین علیہ السلام چھوء فرماوان :" هَوَّنَ عَلَیَّ مَا نَزَلَ بِی أَنَّهُ بِعَیْنِ اللَّهِ"میہ خاطرء چھوء یہ مصیبت آسان کیازء کہ خدا چھوء وچھان ۔یہ چھوء اسہ یی ژاہ اسہ امام حسین علیہ السلام سنز ذکر کرو میہ گوژھ اطمنان گژھن کہ اگر بہء ژورء پاٹھی ، کانسے چھنہ پتہ لگان مگر بہء چھوس نہ گناہ کران کہین یہ زانت کہ میہ چھوء خدا وچھان ۔گو یہ چھوء حسینی بنیوومت ۔یلہ حسین سند تتھ صحراہس منز سوء قربانی گئي نہ ضایع میون یہ "قربۃً الی اللہ"خاطرء کامی کیازء گژھہ ضایع ۔

بیاکھ یوس زن پہلو چھوء امہ کربلاہک یتھی منز زن غئر شیعس خاطرء یہ وضاحت کرنچ چھئي ضرورت ،کیازءکہ ہر زمانس منز چھوء یوان حقیقت تس مختلف طریقو پردء تراو نہء۔اگر ائس صرف رشتہ تچ  بہمو کتھ کرنہء کربلاہس ۔اگر ائس  صرف شہادت تچ کتھ بہمو کرنہ یہ چھوء  امام حسین علیہ السلام سند مقصد محدود کران ۔ مگر یوس زن امام حسین علیہ السلامن پیغام دیوت سوء چھوء روزان تتھے کئن تشنہ لب یوس زن اسہ اتھ وضاحت کرن چھئی۔امام حسین علیہ السلام دیہ فریاد " أَلَا تَرَوْنَ أَنَّ الْحَقَّ لَا يُعْمَلُ بِهِ وَ أَنَّ الْباطِلَ لا يُتَناهی عَنْهُ"توہی چھیونا وچھان حقس پیٹھ چھنہ عملی گژھان، غلط کامہ چھنہ کانہہ روکاوانی ۔بہء چھوس نہ یہ وچھان کہین کہ ...نہ امام حسین علیہ السلامس چھوء ودن!۔ نہ ودن چھوء امہ باپت کہ یمی زن معیار بدلاوکھ [تمیوک نتیجہ کیاہ گو]۔ یوس میدان مباہلہ اس منز اکھ اصول برونہہ کنہ تھوو کہ اگر زن اسلامس خاطرء کانہہ مشکل پیش یی ،کانہہ مصیبت پیش یی ،یہ گژھنہ اسلام چین لنجین پیٹھ اثر پیون کینہ ،بہ ء دمہ سیودوی مولی تھاو بہء برونہہ کنہ مولی گژھن یین پراٹنہ ، کیازء کہ اسلام چھوء خدای سند کُل۔ یہ چھئي ایمانچ دلیل ۔ یمہ ساعتہ عیساین ساتھی چھوء مناظرء  گژھان ۔ تمن چھئي ونان توہیہ چھوی کورمت تحریف خدای سنز کتاب ۔ وین یلہ یمن فکرء چھوء تران کہ نہ اسہ چھوء   تحریف کورمت مگر امہ پتہ چھنہ اعتناء[اعتراف]کران۔امہ پتہ  چھوء پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم فرماوان مباہلہ کروو۔اگر توہیہ خدایس پیٹھ ایمان چھوو توہی پنن شور انیو ، پنن بائژ انیوک بہء تہء یمہ گھرء بار ہیتھ۔پتہء کرو ائس خدایس دعا یوس اپز یو ر چھوء تمس سوزن خدا پنن لعنت ۔

امہ ساعتہ کیاہ ہیتھ چھوء یوان رسول رحمت ، پانہ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ،کھونہ کیت امام حسین علیہ السلام ،دچھنس اتھس تھپ کرت امام حسن مجتی ، امہ پتہ فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا پتہ پتہ پکان ، تمہ پتہ علی مرتضی علیہ السلام پکان ۔یعنی یمی پانژ پنجتن چھئي مئدان نیران کہ اگر زن یمی عیسائي وہ وہ کرن اگر خدای سندء طرفہء کانہہ قہر نازل گژھہ سوء گژھہ اسہ پانژن پنجتن نن پیٹھ نازل گژھن ، باقین مسلمانن گژھنہ واتن زخ کہین ۔ تمن گژھہ اتھی ایڈرس میلن مکمل کہ ائس چھا حقس پیٹھ کنہ باطلس پیٹھ ۔اگر حقس پیٹھ چھئي تمی روزن اتھ مولس آبیاری کران ۔ اگر زن ائس باطلس  پیٹھ چھئي یمی مول یی پراٹنہ یتہ تھی ،بیہ کانہہ گژھنہ امیوک شکار کہین۔

اتین اوس اسلامس تہء عیسائی ین درمیان زء اہل کتابن درمیان  اوس مناقشہ ۔مگر امہ پتہ 40 وری پتہ آو اسلام کی انیک زء لباس  برونہہ کنہ ۔دونوے اسلام چھئي دعوی کران کہ ائس چھئي رسول رحمت ۔اکھ چھوء یزید بن معاویہ دپان بہء چھوس جانشین رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)بیاکھ چھوء امام حسین علیہ السلام یہ تہء چھوء دپان بہء چھوس جانشین رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ۔وین چھا ثابت کرن کوس چھوء رسول رحمت سند جانشین ۔امام حسین علیہ السلام دپان اورء چھوء تیوتاہ بوڈ طاقت بہء ہیکنہ توہیہ وژھہ ناوتھ کہ امی کتھہ کئن چھوء یہ اسلام تحریف کورمت ، بدلومت ۔ لذا چھوء امام حسین علیہ السلام تمہ آیہ پیش یوان یمہ ساتھی زن امسنز اصلیت چھئي نبر نیران ۔ ( دپان یمہ ساعتہ کانہہ آسہ آزماون یہ کیوتھ چھوء دپان امس ساتھی گژھہ سفر کرن،ادء چھوء تران فکرء امسنز خصلت کیاہ چھئس )وین یلہ امی کربلاہ ہچ چھئی کتھ کران ائس تہء گژھو نا پننہ تمہ تحریک ساتھی تمہ وتھنہ بہنہ ساتھی ،تمہ علمء ساتھی ، تمہ جلسہ جلوس ساتھی ،تمہ عزاداری ساتھی یہ معیار مشخص کرن کہ اصل اسلام کوس چھوء نقلی اسلام کوس چھوء۔دہشتگرد اسلام کوس چھوء ۔رحمتک اسلام کوس چھوء ۔گو یوس زن عزاداری کرء تمسنز ذمہ داری چھئي تیژاہ زیادء بئڑ بنان ۔کیازکہ نہ چھوء قرآنس منز انحراف نہ چھوء امام حسین علیہ السلامس منز انحراف ۔ تلہء کیازء چھئي ائس سوء حرکت کران یموک نتیجہ چھوء نیران کہ اسہ منزء چھوء کنہ جایہ انحراف؟

 کیاہ چیز چھوء سبب سپدان کہ سانہ نمازء جماعتہء چھئی کم رنگ؟

 کیاہ چیز چھوء سبب سپدان کہ اسہ چھئ سوء دینی معرفت کم ؟

 کیاہ چیز چھوء سوء سبب سپدان کہ اسہ چھوء قرآنس ساتھی انس تہ محبت کم ؟

یلہ زن سانی پہچانی گئژھ آسن قرآن، نماز، اصول ۔

وجہ چھوء یہ کہ اسہ چھوء تروومت پنن پنن لباس ،پننہ پننہ آیہ ،پننہ پاٹک پننہ محلک،پننہ علاقک... ۔اسہء یوژھ نہ اتھ گوژھ صرف حسین سند، اہل بیتن ہند، قرآن کوئی یوت لباس آسن ۔

یوس تہء کانہہ کتھ گئژھ آسن ،تتھ گئژھ کہوٹ آسن یہ چھا قرآن کس اصولس پیٹھ اتران کنہ نہ ۔بیہ یوس تہ ائس کتھ کران چھئی ،نوے کتھا چھئي یوان مگر ائس چھنہ تتھ پیٹھ اصولی طور پر قائم روزان کہ ائس کیازء چھئی یہ کران ۔ پانے چھئي سوال کران تہ پانے چھئی بہوان جواب دنہ ۔ یلہ زن اسہ کربلا آسہ ہا فکرء طورمت ائس آس ہاو نہ زہین پانے جواب دوان کہین تہ۔

کیاہ ہز چھئي سوال ؟

بہء پرژھہ امامس ۔

اتھ منز چھنہ کہین عئب۔اگر زن توہی پننہ نس عالمس پررژھیو ،اگر پتہ آسس سوء ونہ اگر پتہ آسس نہ سوء کرء رجوع۔ میہ پررژھک ونی گھرء ، گھرء کین اوسک سوال کورمت کہ نذر اوس کربلا سوزن یتہء ہیکہ وا سوء نذر دیتھ ۔میہ دوپکھ میہ چھنہ پتہ کہین،بہء لیکھہ امامس بہء وچھہ جواب کیاہ آسہ ۔دوپن ژء چھی نا پتہ ؟۔ دوپ مس واللہ چھئم نہ پتہ ۔کیازء ہیمہ بہء گناہ  بئلی امہ باپت  [دپس]آ ہیکہ دیہ یا آئت تھاوزء...کیازء کربلاہن ہیچھ ناوی کیاہ ائس؟زیادء کھوتہ زیادء یتھی کئن زن میہ گھرء کیووون تتھے کئن ونیو توہی تہء  امس چھنہ پے یی کینہ ، تمہ کھوتہ چھوناہ بہتر یوس زن پگاہ جہنم تتن یی یہ۔سوء ہانکلہ ہند مسئلہ آستن ، سوء نارء ماتمک مسئلہ آستن ، سوء جلسہ جلوسک مسئلہ آستن  یو س تہ کانہہ کتھ آسہ اجتماعی کتھ آسہ ، اسہ گژھہ پے آسن امامن کیاہ وون [تتھ بارس منز]۔

کانہہ  چھو دپان ہے از کئرکھ ہانکل بند ،پگاہ کرنو وین دئگ بند، کئلکیت کرنو پتہ عزاداری بند ۔

یلہ امام ونہ کرو بند۔

ائس کمہ باپت چھئي کران ؟

امامس تابع روزنہ باپت۔

جناب ابو الفضل العباس علیہ السلامن کیاہ سبق ہیچھہ ناوی ائس ؟

شب عاشورا چھوء جناب زینب سلام اللہ علیہا دوان دوان یوان امام حسین علیہ السلامس نش ژء چھوکھہ بوزان یہ شور کیوتھ چھوء ۔امام حسین علیہ السلام چھوء متوجہ گژھان آواز چھئي ، جناب ابوالفصل العباس علیہ السلامس صدا دوان؛ اے عباس  ژء دیکھ نا نظر وچھک کیاہ دلیل چھئي ۔

جناب ابوالفضل العباس چھئي گژھان اتہ چھئي وچھا ن عمر سعد چھوء حملہء خاطرء  پکان ۔ جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام روکاوان یمن ۔[سبب پررژھان]کیا سا دلیل ؟۔عمر سعد چھوء دپان کہ ؛ابن زیاد (ملعونن)تمی سوز شمر تازء دم فوج ہیتھ سوء ووت از کربلا۔تمی چھوء حکم نامہ سوزمت کہ حسین یا ونی کرناون بیعت نتہ سوز میہ تمی سند سر۔اگر ژء تگی نہ عمر سعدا ژء چھوکھ پننہ منصب پیٹھہ عزل گژھان ،بہء چھوء شمرس دوان یہ منصب ۔

کمس چھوء ونان؟

جناب ابو الفضل العباس علیہ السلامس۔

یمس جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامس متعلق اسہ یوتاہ بوزمت چھوء کہ پانہ مولا امیرالمؤمنین نسی اوس آرزو کہ میہ گژھہ تیوتھ فرزنداہ  آسن    یوس میہ وقتس پیٹھ بکار لگہ ۔وقتس پیٹھ کر اوسس ضرورت ؟۔یمس منز تیژاہ جنگی صلاحیت ائس یمہ ساعتہ صفین نک واقعہ گو 12ووہور اوس تمہ ساعتہ ۔ تمہ ساعتہ جنگی جوہر ہاوی تمی تتھ کہ "ابن شعثاء"ہیوہ تیوتھ نامی پہلوان یوس زن دہن ساسن جنگجون اوس یوان وننہ  کنی پوشہ دہن ساسن ، اکھ چھوء تمسند 5 نیچوی واصل جہنم ژھنان بیہ  ابن شعثاء ہس تہء ۔ یلہ زن کمس اوس جناب ابو الفضل العباس علیہ السلام [اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وآلِ مُحَمَّدٍ وعَجِّلْ فَرَجَهُم]یلہ زن کربلاہس منز 36ووہور 37 ووہور اوس جناب ابو الفضل العباس علیہ السلام۔تمہ ساعتہ کئژاہ نہ صلاحیت آسہ ہا امس منز جنگی تہ جسمانی تہء۔مگر تتین کیاہ سبقاہ چھوء دوان اسہ جناب ابوالفضل العباس ؟

یہ اسہ امسنز جنگی صلاحیت وچھمژ چھئی ، تتھ تناظرس منز گوژھ جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام امے ساعتہ شمشیر کڑن نکہ راوت تھاون عمرء سعدس ۔ کہ بہء چھوس  ونہ زندے ژء کئرتھہ یی ژاہ گستاخی میانس امامس متعلق ۔نہ یہ چھنہ تہ کران ۔کانہہ یژھ کتھ چھنہ میلان ۔ بلکہ کیاہ چھوء جناب ابوالفضل العباس ونان ؟

دپان چھوس؛ میہ بوز چیانی کتھ ،بہء واتناوء یہ چیون پیغام پننہ نس مولا ہس۔

یہ چھوء سارنے کتھن سانین  جواب ۔

بہء چھوس شیعہ ۔ شیعہ گو یوس امامس تابع آسہ ، بہء کوس چھوس ۔ جناب ابوالفضل العباس اسہ یہوے سبق ہیچھہ ناوان ۔بہء چھوس شیعہ ۔ شیعہ یعنی یوس  زن پیروی امامس چھوء ،بہء وچھہ میون امام کیاہ چھوء  ونان ۔ میون دل چھوء ونان کہ بہء گوژھ سے ژء ونی  سر قلم کرن عمر سعدا، یہ چھوء میون دل ونان مگر میہ چھونا وچھن کہ میون امام تہ چھا تی ونان کنہ نہ ۔

اگر اسہ یہ آسہ ہا تورمت فکرء کربلا منزء اسہ آسہ ہا نہ زہین کنفیوژن  ووتھان ہوم کیازء وون نہ  ۔اچھا اگر امام خامنہ ای ین ہانکل دژ حرام قرار عبدالحسین تہء چھا مانان ۔ عبدالحسین  کوس عدد چھوء امامس مقابلہ ۔توہین کرن امامس ، کہوٹ تھاون امام مانون تلے یلہ میون عبدالحسین مانیس ۔ میون عبدالحسین۔ بہء چھوس امس پتہ نماز پران ،میہ چھئی امی نکاح پئرمت....گو امسند محبت چھوء اوسمت شیطانی ، نہ کہ خدائی ۔

اگر امس عبدالحسین نس ساتھی اوس محبت تلہ کیازکہ یہ اوس میہ امام زمان سندس دامنس ساتھی تھپ کرناوان کہ بہ اوسس امیدوار ، میہ چھئي ٹکھ ...اگر میہ امام زمان سندس دامنس تھپ چھئي یعنی  یہ چھئي میہ رسول رحمت سندس دامنس تھپ ۔ اگر وین میہ چھوء یہ یہوے عبدالحسین پگاہ تھاون کہوٹ کہ نہ عبدالحسین اگر  ونہ امام زمان چھوء امام زمان ادء مانن بہء امام زمان ۔یعنی چہ؟امہ کھوتہ کانہہ بئڑ توہین۔بیہ حسین حسین کرن ۔

یہ کوس معیار چھوء کمہ دلیلء ۔ اگر کانسہ شک چھوء کہ فتوی چھنہ امام خامنہ ای ین دیوتمت ۔ دپو ہے نہ فتوی چھنہ آمت کہین ۔

ہر کانسہ چھوء پتہ کہ فتوی چھوء آمت ۔ مگر پتہ کیاہ چھوء [لیکھت]یوان دنہ کیازء کہ میانی عبدالحسین نن مونی نہء۔

سوء کیازء نہ ونان یتھی کئن... ، تمی کیازء وون ...

اگر شک چھئي تمی وون نہ ۔ امام سند فتوی چھنہ ۔ تلہ گیے کتھ۔

یہ چھنہ یتے یوت پورء عالمس منز چھوء یتھی....

یمن زن  باسیو کیاتھان، امام حسین علیہ السلامس لیکھ کیکھ نامہ ، اسہ چھنہ امامی،اسہ یتہ  ائس کرووی یاری  ۔ مگر یمہ ساعتہ کہوٹ لئج،ادہ دوپک اسہ نے اوس نہ وونمتی۔تمی تہ آئس نا شیعی۔ تمی تہ آئس نا  نامی شخصیت ۔

کربلاہ کیاہ چیز چھوء اسہ ہیچھہ ناوان ؟

اسہ کتھ تاونس چھوء پنن پان لوگمت ؟

ائس گئژھ یہ ہیکن بیان کرتھ کہ امام حسین علیہ السلامن کیازء دژ شہادت ؟

دژن شہادت امہ باپت کہ یزید بن معاویس تمس دوپوکھ امیرالمومنین ، حسین بن علی یس وونکھ کافر واجب قتل ۔ ائس چھئي اتھ پیٹھ ودان ۔

اسلامس کوس لباس لوگکھ ائس چھہ اتھ پیٹھ ودان ۔

یمس رسول رحمتن وون ژء چھوک (شے وری چھئی امام حسین نن آنحضرتس ساتھی کئڑمت ۔یعنی بجپن سی منز وون ،منزلسی منز وون تمس رسول رحمت تن )جنت ء کین جوانن ہند سردار ۔

رسول رحمت چھوء ونان حسین چھوء جنت ء کین جوانن ہند سردار ،سوء اسلام اونکھ بارسس سوء چھوء ونان حسین چھوء کافر واجب قتل ۔

یورء چھوء ابوالفضل العباس ونان کہ  بہء کرء  سوری کینہ ..پنن غئرت ، پنن وجود متھہ پننہ نس پوزارس مگر پننہ نس امام سندء اشارء نیبر کرنہ حرکت کینہ ۔

سانین دائرن منز ، سانیس سماجس منز تہ گوژھ نا یہوے جذبہ آسن امتک۔

ائس چھئی صرف قائل ائچھ وٹتھ امامس ۔ کیازء کہ امام چھوء اسہ پے کہ امس منز چھنہ انحرافی کہین ۔یہ چھوء قرآن ، یہ چھوء قرآن۔یتھ کئن نہ قرآنس منز شک کچ گنجائش چھئي تتھے چھنہ اسہ کانہہ امامس متعلق تہ کانہہ شک کچ گنجائش کہین کہ انحراف چھنہ کہین ۔ شک کرو کہ ٹھیک چھا ونان کنہ غلط چھوء ونان۔کربلا تہ اسہ یی ونان ۔

جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام یوتھ امامتک شیدائی ۔

یلہ یہوے عنصر اوس تلہء چھوء ...امس وون نہ امام حسین علیہ السلامن بوی آسنہ باپت" بِنَفسي أنتَ يا عَبّاسُ"امام لوگیہ رتہ چھپہء۔ کوس چھوء ونان ؟۔

امام حسین علیہ السلام چھوء حضرت عباس علیہ السلامس ونان  "بِنَفسي أنتَ"لوگ سے یہ بلایہ ۔ یہ ما چھئی لکٹ کتھ ۔ یہ چھوء امام ونان ، یہ چھنہ سوء معمولی رشت تچ کتھ کہین ۔یہ چھوء جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام پان توت واتنوومت یتین امام زمان چھوء امس ونان "بِنَفسي أنتَ

فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا چھنہ کوری یاژی رسول رحمت تس کہین ،تمی چھوء پنن پان توتن واتہء نوومت کہ رسول رحمت تن وونس"اُمُّ اَبیها"مالی سنز تہء موج۔یہ چھنہ رشتہ بناوان کہین ، تلہء آسہ باقی کورء تہء ۔ رشتہ چھنہ اسلام مانان کہین ۔کردار پنن عمل ۔<إِنَّ أَكْرَمَكُمْ عِنْدَ اللَّهِ أَتْقَاكُمْ> (الحجرات/13) یوس پننہ معیارء تھود ہیکہ کھست ، اتھ اصولس منز تمسند مقام چھوء بلند ۔

یہوے اوس پروانہ وار امام حسین علیہ السلامس امسند علمدار ساتھی ساتھی ۔

"قَالَ الرَّاوِی":راوی ونان: "وَ اشْتَدَّ الْعَطَشُ بِالْحُسَیْنِ علیہ السلام"یمہ ساعتہ امام حسین علیہ السلامس پیٹھ تشنہ گی غالب سپز"فَرَکِبَ الْمُسَنَّاةَ یُرِیدُ الْفُرَاتَ"یوس زن آخری حملہ اوس ،سوء اوس امام تہ مطیع سند دونی ہند یا بائي بارنین ہند ونو س(بائي بارن ونن چھوہ مفہوم سمجھ نس منز آسانی گژھان،نہ چھوء امام تہ تمسند فرمانبردار)جناب امام حسین علیہ السلام تہ جناب ابوالفضل العباس علیہ السلام چھئي یکہ ووٹے وین تدارک کران امہ تریشہء ہند کرو سنز کیازء کہ خیمہ گاہس منز چھوء العطش، الغیاث۔

" فَرَکِبَ الْمُسَنَّاةَ یُرِیدُ الْفُرَاتَ وَ الْعَبَّاسُ أَخُوهُ بَیْنَ یَدَیْهِ"

امام حسین علیہ السلامن تہ ابوالفضل العباس علیہ السلامن کور یکہ وٹے فرات تس کن رخ تہ لشکرء کور احاطہ ۔ ژورو طرفہ یمہ ساعتہ محاصرء گو " ثُمَّ اقْتَطَعُوا الْعَبَّاسَ عَنْهُ"یمہ ساتھی یمن بائي بار نین جدائي گئی ۔ جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامس تہ امام حسین علیہ السلامس ،یا یوس زن بعضی چھئي تعبیر کران کہ یہ اوس جنگي ہنر یوس زن امام حسین علیہ السلام فوج پانس کن متوجہ کور ، یمہ ساعتہ چھگ دژن یمن تاکہ جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامس خاطرء گژھہ امکان سوء گژھہ[شط] فرات کن۔"وَ أَحَاطُوا بِهِ مِنْ کُلِّ جَانِبٍ "  ہر طرفہ کورکھ گیرء ۔دونوے طرفہء ۔ امام حسین علیہ السلامس اونکھ اکہ طرفہ گیراو ، جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامس اونکھ بیہ طرفہء گیراو۔اللہ اکبر۔

تے تیاہ چھئي تیر مقتلو لیکھمت کہ  جناب ابوالفضل العباس علیہ السلامس چھئی وصل گئمت ،حتی علمءچھوء ہر جایہ تیر پیوست گومت مگر نہ اکس جایہ یتین تھپ اوس کرتھ جناب ابوالفضل العباس ۔یعنی باز و تننہ نشہ جدا گژھت تہ جناب ابوالفضل العباس اوس تھپ کرت ۔

آو واویلا۔ یمہ ساعتہ جناب ابوالفضل العباس سن فریاد دیوت  وین، باز تہ گئی وین قلم ،مشک ہند آب تہء گو ضایع ،از زین پیو برزمین ، کمہ حالہء پیو!عزادارو! یمہ ساعتہ وئس چھئی پیوان اتھو ساتھی چھوء انسان سہارء دوان ۔ جناب ابوالفضل العباس کمہ آیہ آسہ از زین بر زمین پیومت ۔ فریاد دتن جناب امام حسین علیہ السلامس کن ۔

امام حسین علیہ السلامن یمہ ساعتہ یہ فریاد علمدار سند بوز۔ فرموون:" الْانَ إِنْکَسَرَ ظَهْری"بس وین پھٹم کمبر۔آہ واویلا۔

آہ واویلا!امام حسین علیہ السلام چھوء[شط] فرات کن متوجہ گژھان۔بعض لیکھان امام حسین علیہ السلام ووچھم نمتھ پتھر بہوان ، روٹن کیاتھان میاٹھی چھوس دوان ۔پوک برونہہ کن اتہء بیوٹھ بیہ پتھر ،تلن کیاہ تھان   اتھ چھوء میاٹھی دوان ۔ راوی دپان برونہہ کن پوکس وچھئم یمی چھئی عباس سند بازو!حسینن اتھن کیتھ رٹمت ۔

آو واویلا!یمہ ساعتہ ووت ابوالفضل العباس علیہ السلامس نش ۔ آہ ۔ ابوالفضل العباس وصیت کران ۔مولا ائچھ منز چھم یہ تیر ، یہ کئڑتوم نبر ۔آخری زیارت کرءہے۔ساتھی چھئے میانی اکھ وصیت ۔ مولا میانی چھئی بس یژی یاژی وصیت ، دوہس ووتوی ژء تمام شہدان جمع کران میانی چھئی یہوے اکھ وصیت   یوتھ نہ میہ خیمہ گاہ واتناوکھ ، کیازءکہ عباس چھوہ حیاء کران یوس درایوو آب اننک سوء ہیوک تتھ وعدس وفا کرتھ۔........

أَلَا لَعْنَةُ اللَّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ(هود/18)وَسَيعْلَمُ الَّذِينَ ظَلَمُوا أَي مُنْقَلَبٍ ينْقَلِبُونَ(الشعراء/227)

 امام حسین علیہ السلام قرآنک آئینہ -08 PDF فایل ڈاونلوڈ کرنہ خاطرء

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ -01

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-02

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-03

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-04

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-05

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-06

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-07

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-08

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-09

·        امام حسین علیہ السلام قرآنک آینہ-10

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
عبارت:  500

قدرت گرفته از سایت ساز سحر